Monday, January 16, 2012

دو ﺑﮩﻨﻮں ﮐﯽ ﭼﺪاﺋﯽ 1‬



‫رﯾﮑﮭﺎ اور ﻟﯿﮑﮭﺎ دوﻧﻮں ﺑﮩﻨﯿﮟ ﺗﮭﯿﮟ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ٨١ ﺳﺎل اور رﯾﮑﮭﺎ ٩١ ﺳﺎل ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ۔ دوﻧﻮں دﮐﮭﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﺳﻨﺪر‬ ‫ﺗﮭﯿﮟ ۔ وﮦ اﭘﻨﮯ ﻣﺎں ُﮐﻤﻨﯽ اور ﺑﺎﭘﻮ ﮐﻠﯿﺎن ﺟﻮ اﯾﮏ ﮐﺴﺎن ﺗﮭﺎ اس ﮔﺎؤں ﻣﯿﮟ ﺳﺎﻟﻮں ﺳﮯ رﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ۔ ان ﮐﯽ ﺑﻠﺪﯾﻮ ﺳﻨﮕﮫ ﺳﮯ‬ ‫ر‬ ‫اﭼﮭﯽ ﺑﻨﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺟﻮ اﭘﻨﯽ ﻣﺎں اور ﺑﯿﭩﮯ وﮐﺮم ﺳﮯ ﺳﺎﺗﮫ ان ﮐﮯ ﭘﮍوس ﻣﯿﮟ ﮨﯽ رﮨﺘﺎ ﺗﮭﺎ ۔ ﺑﻠﺪﯾﻮ اﯾﮏ ﭼﮭﻮﭨﺎ وﯾﺎﭘﺎری ﺗﮭﺎ اس‬ ‫ﻟﺌﮯ اﺳﮯ زﯾﺎدﮦ ﺗﺮ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ دور رﮨﻨﺎ ﭘﮍﺗﺎ ﺗﮭﺎ اور اس ﮐﯽ ﻣﺎں ﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻓﯽ ﻋﻤﺮ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﺗﮭﯽ ۔ ﺟﺐ وﮐﺮم ٠١ ﺳﺎل ﮐﺎ‬ ‫ﺗﮭﺎ ﺑﻠﺪﯾﻮ ﺳﻨﮕﮫ ﮐﯽ ﭘﺘﻨﯽ ﮐﺎ دﯾﮩﺎﻧﺖ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ۔ ﺗﺐ ﺳﮯ ﮐﻠﯿﺎن ﮐﮯ ﭘﺮﯾﻮار واﻟﮯ وﮐﺮم ﮐﺎ ﺑﮩﺖ ﺧﯿﺎل رﮐﮭﺘﮯ ﺗﮭﮯ ۔ اس ﻟﺌﮯ‬ ‫رﯾﮑﮭﺎ ، ﻟﯿﮑﮭﺎ اور وﮐﺮم ﺑﭽﭙﻦ ﺳﮯ اﯾﮏ دوﺳﺮے ﮐﻮ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ ۔ اب وﮐﺮم ٩١ ﺳﺎل ﮐﺎ ﮨﻮ ﭼﮑﺎ ﮨﮯ اور ﮐﺎﻓﯽ ﺑﮍا ﮨﻮ ﮔﯿﺎ‬ ‫ﮨﮯ ۔ ﮔﺎؤں ﮐﺎﻓﯽ ِﭽﮭﮍا ﮨﺆا ﺗﮭﺎ اس ﻟﺌﮯ وﮨﺎں ﺑﺠﻠﯽ ﺗﻮ ﺗﮭﯽ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ اور ﭘﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ اﯾﮏ ﮐﻨﻮاں ﺗﮭﺎ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮔﺎؤں‬ ‫ﭘ‬ ‫ﮐﮯ ﺳﺎرے ﻟﻮگ ﭘﺎﻧﯽ ﺑﮭﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ ۔ ﮔﮭﺮوں ﻣﯿﮟ ﺑﯿﺖ اﻟﺨﻼ اور ﻏﺴﻠﺨﺎﻧہ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﮭﺎ ۔ ﻟﻮگ ﮐﮭﯿﺘﻮں ﻣﯿﮟ ﯾﺎ ﭘﮩﺎڑی ﮐﮯ‬ ‫ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺟﺎ ﮐﺮ اﭘﻨﮯ آپ ﮐﻮ ﮨﻠﮑﺎ ﮐﺮﺗﮯ ۔ ﻧﮩﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ وﮦ ﮔﮭﺎس ﭘﮭﻮﻧﺲ ﮐﺎ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﺳﺎ ﻏﺴﻠﺨﺎﻧہ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﮭﺎ ۔ اب رﯾﮑﮭﺎ ،‬ ‫ﻟﯿﮑﮭﺎ اور وﮐﺮم ﺟﻮاﻧﯽ ﮐﯽ دﮨﻠﯿﺰ ﭘﺮ ﻗﺪم رﮐﮫ رﮨﮯ ﺗﮭﮯ ۔ ﻟﯿﮑﻦ ان ﮐﯽ دوﺳﺘﯽ ﻣﯿﮟ اﺑﮭﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﺪﻻؤ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ ۔ رﯾﮑﮭﺎ‬ ‫ﺟﻮ ﺑﮍی ﺗﮭﯽ وﮦ ﺗﮭﻮڑی ﮨﻮﺷﯿﺎر ﺗﮭﯽ ۔ اب وﮦ دھﯿﺮے دھﯿﺮے ﺟﻨﺴﯽ اﺧﺘﻼط ، ﻋﻮرت اور ﻣﺮدوں ﮐﮯ ﺑﯿﭻ ﮐﺎ ﺳﻤﺒﻨﺪھ ان‬ ‫ﮐﮯ ﺟﻨﺴﯽ اﻧﮕﻮں ﮐﮯ ﺑﺎرے ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻧﻨﮯ ﻟﮕﯽ ﺗﮭﯽ ۔ اس ﮐﯽ ﮐﭽﮫ ﺳﮩﯿﻠﯿﺎں ﺟﻮ اس ﺳﮯ ﻋﻤﺮ ﻣﯿﮟ ﺑﮍی ﺗﮭﯿﮟ اور ﺟﻦ ﮐﯽ‬ ‫ﺷﺎدی ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﺗﮭﯽ وﮦ رﯾﮑﮭﺎ ﮐﻮ ﭼﻮت ، ﻟﻨﮉ ، ﺳﻤﺒﮭﻮگ اور ﺑﭽﮯ ﭘﯿﺪا ﮐﺮﻧﺎ ان ﺳﺐ ﮐﮯ ﺑﺎرے ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻧﮑﺎری دﯾﺎ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯽ‬ ‫۔ رﯾﮑﮭﺎ ﯾہ ﺳﺐ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﻮ ﺑﺘﺎ ﺗﮭﯽ ۔ رﯾﮑﮭﺎ ﻧﮯ دﯾﮑﮭﺎ اس ﮐﮯ ﻣ ّﮯ ﺑﮭﯽ ﺑﮍے ﮨﻮ رﮨﮯ ﺗﮭﮯ اور اس ﮐﯽ ﭼﻮت ﭘﺮ ﺑﮭﯽ‬ ‫ﻤ‬ ‫ﺑﺎل اﮔﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ ۔ اﯾﮏ دن اس ﻧﮯ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ”ﻟﯿﮑﮭﺎ ﺗﻢ اﭘﻨﯽ ﭘﺸﻮاز اﺗﺎرو”. ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ”ﮐﯿﻮں دﯾﺪی”. رﯾﮑﮭﺎ‬ ‫ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﻣﺠﮭﮯ ﺗﯿﺮے ﻣ ّﮯ اور ﭼﻮت دﯾﮑﮭﻨﯽ ﮨﮯ ۔‬ ‫ﻤ‬ ‫ﻣﯿﺮے ﻣ ّﮯ ﺑﮍے ﮨﻮ رﮨﮯ ﮨﯿﮟ اور ﭼﻮت ﭘﺮ ﺑﺎل ﺑﮭﯽ ﮨﯿﮟ ، ﮐﯿﺎ ﺗﯿﺮی ﭼﻮت ﭘﺮ ﺑﺎل ﮨﯿﮟ.” ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ اﭘﻨﯽ ﭘﺸﻮاز اﺗﺎر دی ۔‬ ‫ﻤ‬ ‫ﮔﺎؤں ﮐﯽ ﻋﻮرﺗﯿﮟ اور ﻟﮍﮐﯿﺎں ﭼ ّی ﻧﮩﯿﮟ ﭘﮩﻨﺘﯿﮟ ، ﮐﺒﮭﯽ اﯾﮏ اﻧﮕﯿﺎ ﭘﮩﻦ ﻟﯿﺘﯽ ﮨﯿﮟ اﻧﺪر ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﺗﻮ وﮦ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﮩﻨﺎ ﺗﮭﺎ ۔‬ ‫ﮉ‬ ‫رﯾﮑﮭﺎ اس ﮐﮯ ﻧﺰدﯾﮏ آ ﮔﺌﯽ اور اس ﮐﮯ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﻣ ّﻮں ﮐﻮ اﭘﻨﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮں ﻣﯿﮟ ﻟﮯ ﻟﯿﺎ اور ﮨﻠﮑﮯ ﺳﮯ دﺑﺎﻧﮯ ﻟﮕﯽ ۔‬ ‫ﻤ‬ ‫ﻟﯿﮑﮭﺎ ﺑﻮﻟﯽ”دﯾﺪی ﮔﺪﮔﺪی ﮨﻮ رﮨﯽ ﮨﮯ”. رﯾﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﺗﯿﺮے ﻣ ّﮯ ﺗﻮ ﻣﯿﺮے ﻣ ّﻮں ﺳﮯ ﺗﮭﻮڑے ﭼﮭﻮﭨﮯ ﮨﯿﮟ”. ﭘﮭﺮ رﯾﮑﮭﺎ‬ ‫ﻤ‬ ‫ﻤ‬ ‫ﻧﮯ دﯾﮑﮭﺎ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﯽ ﭼﻮت ﭘﺮ ﮨﻠﮑﮯ اور ﮐﻮﻣﻞ ﺑﺎل اﮔﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ ۔ وﮦ ان ﭘﺮ ﮨﺎﺗﮫ ﭘﮭﯿﺮ ﮐﺮ ﺑﻮﻟﯽ”ﺗﯿﺮی ﭼﻮت ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﺑﺎل‬ ‫ﮨﯿﮟ ۔ ﻣﻄﻠﺐ اب ﺗﻮ ﺑﮭﯽ ﻋﻮرت ﺑﻦ رﮨﯽ ﮨﮯ”. ﭘﮭﺮ دوﻧﻮں ﮨﻨﺴﻨﮯ ﻟﮕﯿﮟ ۔ اب وﮐﺮم ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ان ﺳﺐ ﺑﺎﺗﻮں ﻣﯿﮟ دﻟﭽﺴﭙﯽ ﮨﻮﻧﮯ‬ ‫ﻟﮕﯽ ﺗﮭﯽ ۔ اس ﮐﻮ ﮐﭽﮫ اﯾﺴﮯ دوﺳﺖ ِﻞ ﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ ﺟﻮ اﺳﮯ ﭼﺪاﺋﯽ ﮐﮯ ﺑﺎرے ﻣﯿﮟ ﺑﺘﺎﺗﮯ ﺗﮭﮯ ۔ وﮦ ﺳﺐ ﺷﮩﺮ ﺟﺎ ﮐﺮ آﺗﮯ‬ ‫ﻣ‬ ‫اور ﻧﻨﮕﯽ ﻓﻠﻢ دﯾﮑﮭﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺳﺐ ﻗ ّہ وﮐﺮم ﮐﻮ ﺑﺘﺎﺗﮯ ﺗﮭﮯ ۔ وﮐﺮم ﮐﻮ اﻧﮩﻮں ﻧﮯ اﯾﮏ ﮐﺘﺎب ﺑﮭﯽ دی ﺗﮭﯽ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﻧﻨﮕﯽ‬ ‫ﺼ‬ ‫ﻟﮍﮐﯿﻮں اور ﻋﻮرﺗﻮں ﮐﮯ ﻓﻮﭨﻮ ﮨﻮﺗﮯ ﺗﮭﮯ ۔ ﯾہ ﺳﺐ دﯾﮑﮫ ﮐﺮ وﮐﺮم ﮔﺮﻣﺎ ﺟﺎﺗﺎ ۔ اس ﮐﮯ دوﺳﺘﻮں ﻧﮯ اﺳﮯ ﻣﭩﮫ ﻣﺎرﻧﺎ ﺑﮭﯽ‬ ‫ﺑﺘﺎﯾﺎ ۔ رﯾﮑﮭﺎ ﻧﮯ دﺳﻮﯾﮟ ﺟﻤﺎﻋﺖ ﭘﺎس ﮐﯽ اور ﭘﮭﺮ اس ﻧﮯ ﭘﮍھﺎﺋﯽ ﭼﮭﻮڑ دی ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ دﺳﻮﯾﮟ ﻓﯿﻞ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ اس ﻟﺌﮯ اس‬ ‫ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﭘﮍھﺎﺋﯽ ﭼﮭﻮڑ دی ۔ وﮐﺮم ﺑﮭﯽ دﺳﻮﯾﮟ ﮐﯽ ﭘﮍھﺎﺋﯽ ﮐﺮ رﮨﺎ ﺗﮭﺎ ۔ وﮐﺮم ﮐﺎ ﻣﻦ ﭘﮍھﺎﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﻢ اور ﭼﺪاﺋﯽ ﮐﯽ ﺑﺎﺗﻮں‬ ‫ﻣﯿﮟ زﯾﺎدﮦ ﻟﮕﺎ رﮨﺘﺎ ﺗﮭﺎ ۔ اب وﮦ ﻓﻮﭨﻮ ﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﻟﮍﮐﯽ ﯾﺎ ﻋﻮرت ﮐﻮ ﻧﻨﮕﺎ دﯾﮑﮭﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﺗﮭﺎ ۔ وﮦ ﮨﻤﯿﺸہ اﺳﯽ‬ ‫ﻓﺮاق ﻣﯿﮟ رﮨﺘﺎ ﮐہ ﮐﺐ اس ﮐﻮ اﯾﺴﺎ ﻣﻮﻗﻊ ﻣﻠﮯ ۔ اﯾﮏ دن وﮦ رﯾﮑﮭﺎ اور ﻟﯿﮑﮭﺎ ﺳﮯ ﻣﻠﻨﮯ آﯾﺎ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ رﯾﮑﮭﺎ ﮐﻮ آواز ﻟﮕﺎﺋﯽ‬ ‫۔ اﺗﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﺟﻮاب دﯾﺎ”ﻣﯿﮟ ﻧﮩﺎ رﮨﯽ ﮨﻮں ۔ ﻣﺎں اور ﺑﺎﺑﻮ ﺟﯽ دوﺳﺮے ﮔﺎؤں ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﮐﺎم ﺳﮯ ﮔﺌﮯ ﮨﯿﮟ اور دﯾﺪی‬ ‫اﭘﻨﯽ ﮐﺴﯽ ﺳﮩﯿﻠﯽ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ”. وﮐﺮم ﮐﻮ ﻟﮕﺎ ﯾﮩﯽ ﻣﻮﻗﻊ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﮯ ﻧﻨﮕﮯ ﺑﺪن ﮐﻮ دﯾﮑﮭﻨﮯ ﮐﺎ اور وﮦ ﺟﮩﺎں ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮩﺎ‬ ‫رﮨﯽ ﺗﮭﯽ وﮨﯿﮟ اﯾﮏ ﭘﯿﮍ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭼﮭﭗ ﮔﯿﺎ ۔ ﮔﮭﺎس ﭘﮭﻮﻧﺲ ﮐﺎ ﺑﻨﺎ ﮨﺆا ﻏﺴﻠﺨﺎﻧہ ﺗﮭﺎ اس ﻟﺌﮯ ﯾﮩﺎں وﮨﺎں ﺳﮯ ﮐﮭﻼ ﮨﺆا ﺗﮭﺎ ۔‬ ‫وﮐﺮم اﯾﮏ ﮐﮭﻠﯽ ﺟﮕہ ﺳﮯ ﺗﺎﮐﻨﮯ ﻟﮕﺎ ۔ اس ﻧﮯ دﯾﮑﮭﺎ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﮯ ﺑﺪن ﭘﺮ اﯾﮏ ﺑﮭﯽ ﮐﭙﮍے ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﮯ ۔ اس ﮐﮯ ﻣ ّﮯ‬ ‫ﻤ‬ ‫ﭼﮭﻮﭨﮯ اور ﮔﻮل ﺗﮭﮯ ۔ اس ﮐﺎ ﭘﯿﭧ اﯾﮏ دم ﺳﻤﭩﻞ ﺗﮭﺎ اور ﻧﯿﭽﮯ اس ﮐﯽ ﭼﻮت ﭘﺮ ﮨﻠﮑﮯ ، ﮨﻠﮑﮯ ﺑﺎل اﮔﮯ ﺗﮭﮯ ۔ اس ﮐﯽ‬ ‫ﮔﺎﻧﮉ ﺑﮭﯽ ﭼﮭﻮﭨﯽ اور ﮔﻮل ﺗﮭﯽ..

ﻟﯿﮑﮭﺎ اﭘﻨﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮں ﺳﮯ اس ﮐﯽ ﭼﻮت ﺻﺎف ﮐﺮ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ ۔ ﺑﯿﭻ ﻣﯿﮟ وﮦ اﭘﻨﮯ ﭼﻮﭼﮑﻮں ﮐﻮ‬ ﺑﮭﯽ ﻣﺴﻞ ﮐﺮ ﺻﺎف ﮐﺮ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ ۔ ﯾہ ﺳﺐ دﯾﮑﮫ ﮐﺮ وﮐﺮم ﮐﺎ ﻟﻨﮉ اس ﮐﮯ ﭘﺎﺟﺎﻣﮯ ﮐﮯ اﻧﺪر ﮐﮭﮍا ﮨﻮ ﮔﯿﺎ اور ﻟﻨﮉ ﮐﮯ آﮔﮯ‬ ‫ﺳﮯﺗﮭﻮڑا ﭘﺎﻧﯽ ﻧﮑﻼ ﺟﺲ ﺳﮯ اس ﮐﺎ ﭘﺎﺟﺎﻣہ ﮔﯿﻼ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ۔ وﮦ وﮨﯿﮟ ﮐﮭﮍے ﮐﮭﮍے ﻣﭩﮫ ﻣﺎرﻧﮯ ﻟﮕﺎ ۔ ﺑﮩﺖ دﯾﺮ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ اس ﮐﺎ‬ ‫ﻟﻨﮉ ﺷﺎﻧﺖ ﮨﺆا ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮩﺎ ﮐﺮ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻠﯽ ۔ وﮐﺮم ﭘﯿﮍ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ آﯾﺎ ۔ اس وﻗﺖ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮔﮭﺎﮔﮭﺮا اور ﭼﻮﻟﯽ ﭘﮩﻨﺎ ﺗﮭﺎ‬ ‫۔ وﮐﺮم اس ﮐﮯ ﭘﺎس آ ﮔﯿﺎ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ”ﮐﯿﺎ ﮨﺆا وﮐﺮم”. وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”اﯾﺴﯽ ﮨﯽ ﺗﻢ دوﻧﻮں ﺳﮯ ﻣﻠﻨﮯ آﯾﺎ ﺗﮭﺎ”. ﻟﯿﮑﮭﺎ‬ ‫ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”اﭼﮭﺎ ﮐﯿﺎ ۔ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ اﮐﯿﻠﯽ ﺗﮭﯽ”. وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﭼﻠﻮ ﮐﭽﮫ ﮐﮭﯿﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ”. ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﮐﯿﺎ ﮐﮭﯿﻠﯿﮟ”. وﮐﺮم ﻧﮯ‬ ‫ﮐﮩﺎ”اﻧﺪر ﮐﻤﺮے ﻣﯿﮟ ﭼﻠﻮ ۔ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ آج اﯾﮏ ﻧﯿﺎ ﮐﮭﯿﻞ ﺳﮑﮭﺎﺗﺎ ﮨﻮں”. ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ”. دوﻧﻮں اﻧﺪر ﭼﻠﮯ ﮔﺌﮯ‬ ‫اور وﮐﺮم ﻧﮯ دروازﮦ ﺑﻨﺪ ﮐﺮ دﯾﺎ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﮐﺮﺗﺐ دﮐﮭﺎؤں ﮔﺎ ۔ ﺗﻤﮩﯿﮟ وﯾﺴﮯ ﮨﯽ ﮐﺮﻧﺎ ﮨﻮ ﮔﺎ ۔ اﮔﺮ ﺗﻢ ﻧﮯ‬ ‫وﯾﺴﮯ ﮨﯽ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﺗﻢ ﺟﯿﺖ ﮔﺌﯿﮟ ۔ ﭘﮭﺮ ﺗﻢ ﺟﻮ ﺑﻮﻟﻮ ﮔﯽ وﮦ ﻣﯿﮟ ﮐﺮوں ﮔﺎ”. ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﮐﯿﺎ ﮐﺮﻧﺎ ﮨﻮ ﮔﺎ ﻣﺠﮭﮯ”. وﮐﺮم ﻧﮯ‬ ‫ﮐﮩﺎ”ﭘﮩﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮں وﮦ دﯾﮑﮭﻮ ﭘﮭﺮ وﯾﺴﮯ ﮨﯽ ﮐﺮو”. وﮐﺮم ﮨﺎﺗﮫ ﭘﯿﺮ ﮨﻼ ﮐﺮ ﮐﭽﮫ ﮐﺮﺗﺐ دﮐﮭﺎﺗﺎ ﺗﮭﺎ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ وﯾﺴﮯ ﮨﯽ‬ ‫ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯽ ۔ ﭘﮭﺮ وﮐﺮم ﺳﺮ ﻧﯿﭽﮯ اور ﭘﯿﺮ اوﭘﺮ ﮐﺮ ﮐﮯ دﯾﻮار ﮐﮯ ﺳﮩﺎرے ﮐﮭﮍا ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ۔ ﮐﺎﻓﯽ دﯾﺮ ﺗﮏ وﯾﺴﮯ ﮨﯽ ﮐﮭﮍا رﮨﺎ‬ ‫۔ وﮐﺮم ﻧﮯ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ”اب ﺗﻢ اس ﻃﺮح ﮐﮭﮍی ﮨﻮ ﺟﺎؤ”. ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﻣﯿﮟ ﯾہ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﭘﺎؤں ﮔﯽ”. وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”اس‬ ‫ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮍی ﺑﺎت ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ۔ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﺎری ﻣﺪد ﮐﺮوں ﮔﺎ.” اور وﮐﺮم ﮐﯽ ﺑﺎت ﺳﻦ ﮐﺮ وﮦ ﺳﺮ ﻧﯿﭽﮯ ﮐﺮ ﮐﮯ ﭘﯿﺮ اوﭘﺮ‬ ‫اﭨﮭﺎﻧﮯ ﻟﮕﯽ ﺗﺒﮭﯽ وﮐﺮم ﻧﮯ اس ﮐﯽ دوﻧﻮں ﭨﺎﻧﮕﯿﮟ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ اوﭘﺮ اﭨﮭﺎ ﻟﯿﺎ ۔ اﯾﺴﮯ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﺎ ﮔﮭﺎﮔﮭﺮا ﻧﯿﭽﮯ ﮐﯽ اور‬ ‫اس ﮐﮯ ﻣﻨہ ﭘﺮ ﮔﺮا اور ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﺎ ﻣﻨہ ڈھﮏ ﮔﯿﺎ ۔ وﮐﺮم ﮐﻮ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﮕﮭﯿﮟ اور ﭼﻮت دﮐﮭﺎﺋﯽ دﯾﮟ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﭼّﺎ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ‬ ‫ﻠ‬ ‫اور ﮐﮩﺎ” ﻣﺠﮭﮯ ﮐﭽﮫ دﮐﮫ ﻧﮩﯿﮟ رﮨﺎ ﮨﮯ ۔ ﻣﯿﮟ ﮔﺮ ﺟﺎؤں ﮔﯽ ۔ وﮐﺮم ﻣﺠﮭﮯ ﺳﯿﺪھﺎ ﮐﺮ دو”. وﮐﺮم ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﮯ دوﻧﻮں ﭘﯿﺮ ﭘﮑﮍ‬ ‫ﮐﺮ ﮐﮭﮍا ﺗﮭﺎ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﮔﺎ” اور اس ﮐﮯ ﭘﯿﺮوں ﮐﻮ دﯾﻮار ﮐﮯ ﺳﮩﺎرے ﮐﮭﮍا ﮐﯿﺎ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﺗﻢ ﮨﻠﻨﺎ‬ ‫ﻣﺖ اور اﭘﻨﺎ ﮨﺎﺗﮫ اس ﮐﯽ ﮐﻮری ﺟﺎﻧﮕﮭﻮں ﭘﺮ ﭘﮭﯿﺮﻧﮯ ﻟﮕﺎ ۔ ﭘﮭﺮ اس ﻧﮯ اس ﮐﯽ ﭨﺎﻧﮕﯿﮟ ﺗﮭﻮڑی ﭘﮭﯿﻼ دﯾﮟ اور اﭘﻨﯽ اﯾﮏ‬ ‫اﻧﮕﻠﯽ اس ﮐﯽ ﭼﻮت ﮐﮯ ﭼﮭﯿﺪ ﻣﯿﮟ ڈال دی ۔ اﭼﺎﻧﮏ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﯽ ﭨﺎﻧﮕﯿﮟ دﯾﻮار ﺳﮯ ﺗﮭﻮڑی دور ﮨﻮ ﮔﺌﯿﮟ اور اﯾﮏ ﻃﺮف وﮦ‬ ‫ﮐﻤﺮ ﮐﮯ ﺑﻞ ﮔﺮ ﭘﮍی ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ روﻧﮯ ﻟﮕﯽ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ اﺳﮯ اﭨﮭﺎﯾﺎ اور ﺑﺴﺘﺮ ﭘﺮ ﻟﭩﺎ دﯾﺎ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ”ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮐﮩﯿﮟ ﭼﻮٹ‬ ‫ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﯽ”. ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﻧﮩﯿﮟ ۔ ﭘﺮ ﮐﻤﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﻮڑا درد ﮨﻮ رﮨﺎ ﮨﮯ”. وﮐﺮم ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ”ﺗﻢ ﻧﮯ اﭘﻨﯽ ﭨﺎﻧﮕﯿﮟ ﮐﯿﻮں دﯾﻮار‬ ‫ﺳﮯ ﮨﭩﺎﺋﯿﮟ”. ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”وﮦ ﺗﻢ ﻣﯿﺮی ﭼﻮت ﻣﯿﮟ اﻧﮕﻠﯽ ڈاﻟﯽ اور ﻣﺠﮭﮯ ﮔﺪﮔﺪی ﮨﻮ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ”. وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ ۔‬ ‫ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﺎری ﮐﻤﺮ ﭘﺮ ﺗﯿﻞ ﺳﮯ ﻣﺎﻟﺶ ﮐﺮ دﯾﺘﺎ ﮨﻮں”. وﮐﺮم ﺗﯿﻞ ﻟﮯ ﮐﺮ آﯾﺎ اور اس ﻧﮯ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﮯ ﮔﮭﺎﮔﮭﺮے ﮐﻮ اوﭘﺮ ﮐﯿﺎ ۔ ﭘﮭﺮ‬ ‫وﮦ اس ﮐﯽ ﮐﻤﺮ ﮐﻮ ﺗﯿﻞ ﮐﯽ ﻣﺎﻟﺶ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﺎ ۔ دھﯿﺮے دھﯿﺮے وﮦ اس ﮐﯽ ﮔﺎﻧﮉ اور ﺟﺎﻧﮕﮭﻮں ﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﻣﺎﻟﺶ ﮐﺮ رﮨﺎ ﺗﮭﺎ ۔‬ ‫وﮐﺮم اس ﮐﯽ ﭼﻮت ﻣﯿﮟ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ اﻧﮕﻠﯽ ڈاﻟﯽ اور ﮨﻼﻧﮯ ﻟﮕﺎ ۔ اس ﮐﯽ ﭼﻮت ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﺗﯿﻞ ﻟﮕﺎﯾﺎ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ اب ﮨﻨﺲ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ‬ ‫اور ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﯽ”وﮐﺮم ﻣﺠﮭﮯ وﮨﺎں ﮔﺪﮔﺪی ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ”. وﮐﺮم ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ”ﺗﻤﮩﯿﮟ ﯾہ اﭼﮭﺎ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ”. ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﮨﺎں ﺑﮍا ﻣﺰا‬ ‫آ رﮨﺎ ﮨﮯ”. وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﺗﻢ ﺑﺲ اﯾﺴﯽ ﮨﯽ ﻟﯿﭩﯽ رﮨﻮ”. وﮐﺮم ﻧﮯ اس ﮐﯽ ﭼﻮت ﮐﮯ ﺑﺎﻟﻮں ﭘﺮ ﮨﺎﺗﮫ ﭘﮭﯿﺮا اور اس ﮐﯽ ﺟﺎﻧﮕﮭﻮں‬ ‫ﮐﻮ ﭼﺎﭨﻨﮯ اور ﭼﻮﻣﻨﮯ ﻟﮕﺎ ۔ اس ﮐﯽ ﭼﻮت ﮐﮯ ﭼﮭﯿﺪ ﮐﻮ ﭘﮭﯿﻼ ﮐﺮ اس ﻣﯿﮟ ﺟﯿﺒﮫ ڈال ﮐﺮ ﭘﮭﯿﺮﻧﮯ ﻟﮕﺎ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻣﺴﺖ ﮨﻮﺋﮯ ﺟﺎ‬ ‫رﮨﯽ ﺗﮭﯽ ۔ وﮦ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﯽ”وﮐﺮم ﺑﮩﺖ ﻣﺰا آ رﮨﺎ ﮨﮯ” اور آﮨﯿﮟ ﺑﮭﺮ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺳﮯ اس ﮐﮯ ﭼﻮﻟﯽ ﮐﮯ‬ ‫آﻧﮑﮍے ﮐﮭﻮل دﯾﮯ اور ﭼﻮﻟﯽ ﮐﻮ اﻟﮓ ﮐﺮ دﯾﺎ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ اب اوﭘﺮ ﺳﮯ ﻧﻨﮕﯽ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ اور اس ﮐﮯ ﮔﻮل ﻣ ّﮯ وﮐﺮم ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ‬ ‫ﻤ‬ ‫ﺗﮭﮯ ۔ وﮐﺮم دوﻧﻮں ﮨﺎﺗﮭﻮں ﺳﮯ اس ﮐﻮ دوﻧﻮں ﻣ ّﻮں ﮐﻮ دﺑﺎﻧﮯ ﻟﮕﺎ ۔ اور ﺑﯿﭻ ﻣﯿﮟ ﭼﻮﭼﮑﻮں ﮐﻮ اﻧﮕﻠﯿﻮں ﮐﮯ ﺑﯿﭻ ﻣﯿﮟ رﮐﮫ‬ ‫ﻤ‬ ‫ﮐﺮ ﻣﺴﻠﺘﺎ ﺗﮭﺎ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ وﮐﺮم ﮐﮯ ﺑﺎﻟﻮں ﻣﯿﮟ ﮨﺎﺗﮫ ﭘﮭﯿﺮ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ اور اس ﮐﯽ ﻣﻨہ ﮐﻮ اﭘﻨﮯ ﻣ ّﻮں ﭘﺮ دﺑﺎ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ ۔ اﺗﻨﮯ ﻣﯿﮟ‬ ‫ﻤ‬ ‫ﻧﮩﯿﮟ رﯾﮑﮭﺎ ﮐﯽ آواز ﺳﻨﺎﺋﯽ دی ۔ وﮦ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﻮ ﺑﻼ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ ۔ ﺗﺐ ﮨﯽ وﮐﺮم ﮐﮭﮍا ﮨﻮ ﮔﯿﺎ اور ﺟﻠﺪی ﺳﮯ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﻮ ﭼﻮﻟﯽ ﭘﮩﻨﺎ‬ ‫ﮐﺮ اس ﮐﮯ آﻧﮑﮍے ﻟﮕﺎ دﯾﮯ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ دروازﮦ ﮐﮭﻮﻻ اور رﯾﮑﮭﺎ ﻧﮯ دﯾﮑﮭﺎ وﮐﺮم اﻧﺪر ﺑﯿﭩﮭﺎ ﮨﺆا ﺗﮭﺎ ۔ رﯾﮑﮭﺎ ﻧﮯ‬ ‫ﭘﻮﭼﮭﺎ”وﮐﺮم ﺗﻢ ﮐﺐ آﺋﮯ” وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”اﺑﮭﯽ ﺗﮭﻮڑی دﯾﺮ ﭘﮩﻠﮯ اور ﮨﻢ دوﻧﻮں ﺑﯿﭩﮭﮯ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﺑﺎت ﮐﺮ رﮨﮯ ﺗﮭﮯ”. رﯾﮑﮭﺎ‬ ‫ﻧﮩﺎﻧﮯ ﭼﻠﯽ ﮔﺌﯽ ﺗﺐ وﮐﺮم ﻧﮯﻟﯿﮑﮭﺎ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ “ﻣﯿﮟ ﺟﺎ رﮨﺎ ﮨﻮں”. ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﮨﻢ ﭘﮭﺮ ﮐﺐ اﯾﺴﮯ..” وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﮨﻢ ﭘﮭﺮ‬ ‫ﮐﺒﮭﯽ ﻓﺮﺻﺖ ﻣﯿﮟ ﻣﻠﯿﮟ ﮔﮯ ﺗﺐ ﯾہ ﮐﮭﯿﻞ ﮐﮭﯿﻠﯿﮟ ﮔﮯ”. ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻣﺴﮑﺮا دی ۔ اﯾﮏ دن ﺻﺒﺢ وﮐﺮم ﺻﺒﺢ ﺟﻠﺪی اﭨﮫ ﮔﯿﺎ ۔ وﮦ‬ ‫اﯾﺴﯽ ﮨﯽ ﺳﯿﺮ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﮭﯿﺖ ﮐﯽ اور ﭼﻞ ﭘﮍا ۔ اس ﻧﮯ دﯾﮑﮭﺎ اﯾﮏ ﻋﻮرت اور ﻟﮍﮐﯽ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﻟﻮﭨﺎ ﻟﯿﮯ ﭘﮩﺎڑی ﮐﯽ‬ ‫ﻃﺮف ﺟﺎ رﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ ۔ اﺳﮯ ﭘﺘہ ﭼﻞ ﮔﯿﺎ ﮐہ ﯾہ ﺳﻨﺪاس ﮐﺮﻧﮯ ﺟﺎ رﮨﯽ ﮨﯿﮟ اور وﮦ ان ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭼﻞ ﭘﮍا ۔ وﮦ ﭘﮩﺎڑ‬ ‫ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮐﯽ ﻃﺮف ﺟﺎ رﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ ۔ وﮐﺮم ان ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺟﺎ رﮨﺎ ﺗﮭﺎ ۔ ﻋﻮرت وﮨﺎں ﺟﺎ ﮐﺮ رک ﮔﺌﯽ اور ادھﺮ‬ ‫ادھﺮ دﯾﮑﮭﻨﮯ ﻟﮕﯽ ۔ وﮐﺮم ﺟﮭﺎڑﯾﻮں ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭼﮭﭗ ﮔﯿﺎ ۔ وﮦ ﻋﻮرت ﺟﮭﺎڑﯾﻮں ﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﻓﺎﺻﻠﮯ ﭘﺮ ﮐﮭﮍی ﺗﮭﯽ اور اس‬ ‫ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ اس ﮐﯽ ﻟﮍﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﺗﮭﯽ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ دﯾﮑﮭﺎ اس ﻋﻮرت ﻧﮯ اﭘﻨﺎ ﮔﮭﺎﮔﮭﺮا ﮐﻤﺮ ﺗﮏ اوﭘﺮ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ۔ اور اﭘﻨﮯ دوﻧﻮں‬ ‫ﭨﺎﻧﮕﯿﮟ ﮔﮭﭩﻨﻮں ﺳﮯ ﻣﻮڑ ﮐﺮ ﮔﺎﻧﮉ ﭘﮭﯿﻼ ﮐﺮ ﺑﯿﭩﮫ ﮔﺌﯽ ۔ وﮐﺮم ﮐﻮ اس ﮐﯽ ﺑﮍی اور ﮔﮭﻨﮯ ﺑﺎﻟﻮں واﻟﯽ ﮐﺎﻟﯽ ﭼﻮت ﺻﺎف دﮐﮭﺎﺋﯽ‬ ‫دے رﮨﯽ ﺗﮭﯽ ۔ اس ﻧﮯ دﯾﮑﮭﺎ وﮦ ﻋﻮرت ﭘﯿﺸﺎب ﮐﺮ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ اور اس ﮐﯽ ﭼﻮت ﺳﮯ ﭘﯿﺸﺎب ﮐﯽ دھﺎرا ﻧﮑﻞ ﭘﮍی ۔

اس ﮐﯽ‬ ‫ﮔﺎﻧﮉ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﻧﮑﻞ رﮨﺎ ﺗﮭﺎ ۔ وﮐﺮم ﺳﻤﺠﮫ ﮔﯿﺎ وﮦ ﺳﻨﺪاس ﻧﮑﻞ رﮨﯽ ﮨﮯ ۔ اس ﻧﮯ دﯾﮑﮭﺎ ﻟﮍﮐﯽ ﻧﮯ اﭘﻨﯽ ﺷﻠﻮار ﮐﮭﻮﻟﯽ اور‬ ﮔﺎﻧﮉ وﮐﺮم ﮐﮯ ﻃﺮف ﮔﮭﻤﺎ ﮐﺮ ﺑﯿﭩﮫ ﮔﺌﯽ ۔ اس ﻧﮯ دﯾﮑﮭﺎ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﯽ ﮔﺎﻧﮉ ﮐﮯ ﭼﮭﯿﺪ ﮐﮭﻞ رﮨﺎ ﺗﮭﺎ اور اس ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺳﻨﺪاس ﮐﯽ‬ ‫ﻟﻤﺒﯽ ﻟﮍی ﻧﮑﻠﯽ ۔ ﯾہ ﺳﺐ دﯾﮑﮫ ﮐﺮ وﮐﺮم ﮐﺎ ﻟﻨﮉ ﮐﮭﮍا ﮨﻮ ﮔﯿﺎ اور وﮦ وﮨﯿﮟ ﻣﭩﮫ ﻣﺎرﻧﮯ ﻟﮕﺎ ۔ ﺗﮭﻮڑی دﯾﺮ ﺑﻌﺪ وﮦ ﻋﻮرت اﭘﻨﯽ‬ ‫ﮔﺎﻧﮉ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﻧﯽ ڈال ﮐﺮ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ اس ﮐﻮ ﺻﺎف ﮐﺮ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ ۔ اس ﻧﮯ اﭘﻨﯽ ﭼﻮت ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺻﺎف ﮐﯿﺎ ۔ ﻟﮍﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﮔﺎﻧﮉ دھﻮ ﮐﺮ‬ ‫ﮐﮭﮍی ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ۔ وﮦ دوﻧﻮں وﮨﺎں ﺳﮯ ﭼﻞ دﯾﮟ ۔ وﮐﺮم ﺑﮭﯽ وﮨﺎں ﺳﮯ ﭼﻼ ﮔﯿﺎ ۔‬ ‫اﯾﮏ دن رﯾﮑﮭﺎ ﺳﮯ ﻣﻠﻨﮯ اس ﮐﯽ ﺳﮩﯿﻠﯽ ﮔﻮری آﺋﯽ ﺗﮭﯽ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ اس وﻗﺖ ﺑﺎﮨﺮ ﮔﺌﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﮐﮩﯿﮟ ۔ ﮔﻮری ﮐﯽ ﺷﺎدی ﮨﻮ ﭼﮑﯽ‬ ‫ﺗﮭﯽ اور وﮦ اﭘﻨﮯ ﺳﺴﺮال اور ﭘﺘﯽ ﮐﮯ ﺑﺎرے ﻣﯿﮟ ﺑﺘﺎ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ ۔ اس ﻧﮯ اﭘﻨﯽ ﺳﮩﺎگ رات ﮐﮯ ﻗ ّﮯ ﺑﺘﺎﺋﮯ ۔ ﯾہ ﺳﻦ ﮐﺮ‬ ‫ﺼ‬ ‫رﯾﮑﮭﺎ ﮐﯽ ﭼﻮت ﮔﯿﻠﯽ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﯽ ۔ اس ﮐﺎ ﭼﮩﺮﮦ ﺑﮭﯽ ﮐﭽﮫ ﻻل ﭘﮍ ﮔﯿﺎ ۔ ﮔﻮری ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ”ﮐﯿﻮں رﯾﮑﮭﺎ ﯾہ ﺳﺐ ﺳﻦ ﮐﺮ ﺗﯿﺮی‬ ‫ﭼﻮت ﮔﯿﻠﯽ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﻧﺎ” رﯾﮑﮭﺎ ﭼﻮﻧﮏ ﮔﺌﯽ اور ﭘﻮﭼﮭﺎ”ﺗﺠﮭﮯ ﮐﯿﺴﮯ ﭘﺘہ ﭼﻼ”. ﮔﻮری ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﺗﯿﺮا ﭼﮩﺮﮦ اور ﮨﺎؤ ﺑﮭﺎؤ دﯾﮑﮫ‬ ‫ﮐﺮ ﭘﺘہ ﭼﻞ ﮔﯿﺎ.” رﯾﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﮐﯿﺎ ﮐﺮوں ﮔﻮری ﻣﺠﮭﮯ ﺷﺎدی ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ِﭼﮭﺎ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺷﺎدی ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﻣﺰا‬ ‫ا‬ ‫ﻟﻮﭨﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﮨﻮں”. ﮔﻮری ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﯾﮩﯽ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ ۔ اﭘﻨﮯ ﮔﺎؤں ﻣﯿﮟ ﮐﱡﻮ ﮨﮯ ﻧﺎ۔ اس ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﺌﯽ ﺑﺎر‬ ‫ﻠ‬ ‫ﭼﺪاﺋﯽ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ۔ ﮐﱡﻮ ﮐﯽ ﺷﺎدی ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﺗﺐ اس ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﭼﮭﻮڑ دﯾﺎ اس ﻟﺌﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺷﺎدی ﮐﺮ ﻟﯽ ۔ ﻣﯿﺮے ﭘﺘﯽ اور‬ ‫ﻠ‬ ‫ﺳﺴﺮال واﻟﻮں ﮐﻮ اس ﺑﺎرے ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﺘہ”. ﮔﻮری ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ”ﺗﺠﮭﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﺴﻨﺪ ﮨﮯ”. رﯾﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﮨﺎں.. ﻣﺠﮭﮯ وﮦ‬ ‫وﮐﺮم ﭘﺴﻨﺪ ﮨﮯ”. ﮔﻮری ﻧﮯ ﮐﮩﺎ “اﭼﮭﯽ ﺑﺎت ﮨﮯ ۔ اس ﺳﮯ ﺷﺎدی ﮐﺮ ﻟﮯ”. رﯾﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﻟﯿﮑﻦ اس ﮐﯽ ﭘﮍھﺎﺋﯽ اﺑﮭﯽ ﺑﺎﻗﯽ‬ ‫ﮨﮯ”. ﮔﻮری ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ ، ﭘﮍھﺎﺋﯽ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺷﺎدی ﮐﯽ ﺑﺎت ﮐﺮﻧﺎ ۔ ﻟﯿﮑﻦ اﺑﮭﯽ ﺗﻮ اﭘﻨﯽ ﭼﻮت ﮐﻮ ﺷﺎﻧﺖ ﮐﺮوا ﺳﮑﺘﯽ‬ ‫ﮨﮯ”. رﯾﮑﮭﺎ ﮨﻨﺲ ﭘﮍی ۔ اﯾﮏ دن ﺷﺎم ﮐﻮ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﻨﻮﯾﮟ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﻧﯽ ﺑﮭﺮﻧﮯ ﺟﺎ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ اﺳﮯ دﯾﮑﮫ ﻟﯿﺎ اور اس ﮐﻮ‬ ‫ﺑﻼﯾﺎ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ دوڑ ﮐﺮ وﮐﺮم ﮐﮯ ﭘﺎس ﮔﺌﯽ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﭼﻠﻮ ﮨﻢ ﮐﮭﯿﺖ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭼﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ ۔ اس دن ﮐﯽ ﻃﺮح ﮨﻢ وﮨﺎں‬ ‫ﺧﻮب ﻣﺰا ﮐﺮﯾﮟ ﮔﮯ”. ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﻟﯿﮑﻦ ﭘﺎﻧﯽ ﺑﮭﺮ ﮐﺮ ﻟﮯ ﺟﺎﻧﺎ ﮨﮯ” وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﮔﮭﺒﺮاؤ ﻣﺖ ۔ ﮐﮩہ دﯾﻨﺎ وﮐﺮم ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ‬ ‫ﺗﮭﯽ اس ﻟﺌﮯ ﺗﮭﻮڑی دﯾﺮ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ.” دوﻧﻮں ﮐﮭﯿﺖ ﮐﯽ ﻃﺮف ﭼﻞ ﭘﮍے ۔ ﮐﮭﯿﺖ ﮐﯽ ﭼﮭﻮڑ ﭘﺮ اﯾﮏ ﭘﯿﮍ ﮐﮯ ﻧﯿﭽﮯ دوﻧﻮں ﺑﯿﭩﮫ‬ ‫ﮔﺌﮯ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ اﭘﻨﺎ ﮔﮭﮍا اﯾﮏ ﻃﺮف رﮐﮫ دﯾﺎ ۔ ﭼﺎروں اور ﺑﮍی ﮔﮭﺎس ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﮐﺎرن ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﻧﻈﺮ ان ﭘﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﮍ‬ ‫ﺳﮑﺘﯽ ﺗﮭﯽ اور وﮨﺎں ﻟﻮﮔﻮں ﮐﻮ آﻧﺎ ﺟﺎﻧﺎ ﮐﻢ ﺗﮭﺎ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”وﮐﺮم ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﺳﮯ ﺑﮩﺖ ﭘﯿﺎر ﮐﺮﺗﯽ ﮨﻮں”. وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﻣﯿﮟ‬ ‫ﺑﮭﯽ” اور ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﻮ اﭘﻨﮯ ﮔﻠﮯ ﺳﮯ ﻟﮕﺎ دﯾﺎ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﮯ ﮔﺎل ، ﺳﺮ ، ﮔﺮدن اور ﮨﻮﻧﭩﻮں ﮐﻮ ﭼﻮﻣﻨﮯ ﻟﮕﺎ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ‬ ‫ﺑﮭﯽ اس ﮐﻮ ﭼﻮم رﮨﯽ ﺗﮭﯽ ۔ ﭘﮭﺮ وﮐﺮم ﻧﮯ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﯽ ﭼﻮﻟﯽ ﮐﮭﻮل ﮐﺮ اﻟﮓ ﮐﺮ دی اور اس ﮐﺎ ﮔﮭﺎﮔﮭﺮا ﺑﮭﯽ اﺗﺎر دﯾﺎ ۔ اب‬ ‫ﻟﯿﮑﮭﺎ ﭘﻮری ﻃﺮح ﻧﻨﮕﯽ ﮨﻮ ﮐﺮ وﮐﺮم ﮐﯽ ﮔﻮد ﻣﯿﮟ ﻟﯿﭩﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ ﺑﮭﯽ اﭘﻨﺎ ﺟﺒﮭﺎ اور ﭘﺎﺟﺎﻣہ اﺗﺎر دﯾﺎ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ‬ ‫ﭘﮩﻠﯽ ﺑﺎر ﮐﺴﯽ ﻟﮍﮐﮯ ﮐﺎ ﻟﻨﮉ دﯾﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ ۔ وﮐﺮم ﮐﺎ ﻟﻨﮉ ﮐﺎﻓﯽ ﺑﮍا ﺗﮭﺎ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ اﭘﻨﮯ ﻟﻨﮉ ﮐﻮ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﻤﺎ دﯾﺎ ۔‬ ‫ﻟﯿﮑﮭﺎ ﺑﮍے ﭘﯿﺎر ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺳﮩﻼﻧﮯ ﻟﮕﯽ ۔ وﮐﺮم ﮐﮯ ﺑﺪن ﭘﺮ اﯾﮏ ﺳﮩﺮن دوڑ ﮔﺌﯽ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﺗﻢ اﺳﮯ اﭘﻨﮯ ﻣﻨہ ﻣﯿﮟ‬ ‫ﻟﮯ ﮐﮯ ﭼﻮﺳﻮ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﻣﯿﮟ ﯾہ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﯽ”. وﮐﺮم ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﺗﻢ اﯾﮏ ﺑﺎر ﮐﺮو ۔ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ اﺳﮯ ﺑﺎر ﺑﺎر ﭼﻮﺳﻨﺎ‬ ‫ﭼﺎﮨﻮ ﮔﯽ”. ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ وﮐﺮم ﮐﺎ ﻟﻨﮉ ﻣﻨہ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﺮ ﻟﯿﺎ اور دھﯿﺮے دھﯿﺮے ﭼﻮﺳﻨﮯ ﻟﮕﯽ ۔ وﮐﺮم ﮐﯽ آﻧﮑﮭﯿﮟ ﺑﻨﺪ ﮨﻮ رﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ ۔‬ ‫اﺳﮯ ﺑﮍا ﻣﺰا آ رﮨﺎ ﺗﮭﺎ ۔ اب ﻟﯿﮑﮭﺎ ﺑﮭﯽ اس ﮐﮯ ﻟﻨﮉ ﭼﻮﺳﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﯿﭽﮯ ﺟﮭﮏ ﮔﺌﯽ ﺗﻮ ﺗﮭﯽ ۔ اﭼﺎﻧﮏ ﮨﯽ وﮐﺮم ﺟﮭﮍ ﮔﯿﺎ اور‬ ‫اﭘﻨﮯ ﻟﻨﮉ ﮐﺎ ﭘﺎﻧﯽ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﮯ ﻣﻨہ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﭼﮭﻮڑ دﯾﺎ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﻮ ﺟﮭﭩﮑﺎ ﻟﮕﺎ ۔ اس ﻧﮯ ﻟﻨﮉ ﮐﻮ اﭘﻨﮯ ﻣﻨہ ﺳﮯ ﻧﮑﺎل دﯾﺎ ۔ اﺑﮭﯽ ﺑﮭﯽ‬ ‫ﻟﻨﮉ ﺳﮯ ﻻر ﭨﭙﮏ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﻟﻨﮉ ﮐﻮ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ اﺳﮯ ﭼﺎﭨﻨﮯ ﻟﮕﯽ ۔ وﮐﺮم ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﮯ ﻣ ّﻮں ﮐﻮ دﺑﺎﻧﮯ ﻟﮕﺎ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ‬ ‫ﻤ‬ ‫ﮐﮩﺎ”وﮐﺮم ﻣﯿﺮی ﭼﻮت ﮔﯿﻠﯽ ﮨﻮ رﮨﯽ ﮨﮯ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﺮی ﭼﻮت ﺳﮯ ﺑﮭﯽ اﭘﻨﯽ ﭘﺎﻧﯽ ﻧﮑﻠﮯ ﮔﺎ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﮯ دوﻧﻮں‬ ‫ﭨﺎﻧﮕﯿﮟ ﭘﮭﯿﻼ دﯾﮟ اور اس ﮐﯽ ﭼﻮت ﻣﯿﮟ اﭘﻨﯽ اﻧﮕﻠﯽ ڈال دی ۔ اس ﻧﮯ دﯾﮑﮭﺎ اس ﮐﯽ اﻧﮕﻠﯽ ﮔﯿﻠﯽ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﺗﮭﯽ ۔ وﮦ اﻧﮕﻠﯽ‬ ‫ﻧﮑﺎل ﮐﺮ ﭼﺎﭨﻨﮯ ﻟﮕﺎ ۔ ﯾہ دﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﻟﯿﮑﮭﺎ اور ﮔﺮﻣﺎﻧﮯ ﻟﮕﯽ اور اس ﮐﯽ ﭼﻮت ﺳﮯ ﻓ ّارﮦ ﭼﮭﻮٹ ﭘﮍا ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ اﭘﻨﯽ ﺟﯿﺒﮫ‬ ‫ﺆ‬ ‫ﺳﮯ اس ﮐﮯ رس ﮐﻮ ﭼﺎﭨﻨﮯ ﻟﮕﺎ ۔ ﭘﮭﺮ وﮦ ﮐﭽﮫ رس ﻟﮯ ﮐﺮ اﭘﻨﮯ ﻟﻨﮉ ﭘﺮ ﻟﮓ دﯾﺎ اور ﻟﻨﮉ ﮐﻮ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﯽ ﭼﻮت ﮐﮯ دوار ﭘﺮ‬ ‫رﮐﮫ ﮐﺮ ﮨﻠﮑﺎ ﺳﺎ دھ ّﺎ دﯾﺎ ۔ ﻟﻨﮉ آﺳﺎﻧﯽ ﺳﮯ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﯽ ﭼﻮت ﮐﮯ اﻧﺪر ﮔﮭﺲ ﮔﯿﺎ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﭼّﺎ اﭨﮭﯽ”اوﺋﯽ ﻣﺎں..ﻣﯿﮟ ﻣﺮ‬ ‫ﻠ‬ ‫ﮑ‬ ‫ﮔﺌﯽ..آﮦ…اوﺋﯽ ۔ ﻣﯿﺮی ﭼﻮت ﭘﮭﭧ ﮔﺌﯽ”. وﮐﺮم ﭘﻮرے ﺟﻮش ﻣﯿﮟ اﭘﻨﮯ ﻟﻨﮉ ﮐﻮ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﯽ ﭼﻮت ﮐﮯ اﻧﺪر ﺑﺎﮨﺮ ﮐﺮ رﮨﺎ ﺗﮭﺎ ۔‬ ‫ﻟﯿﮑﮭﺎ اب ِّﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺳﺴﮑﺎرﯾﺎں ﺑﮭﺮ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ ۔ اس ﻧﮯ اﭘﻨﯽ ﭨﺎﻧﮕﯿﮟ اور ﭘﮭﯿﻼ دﯾﮟ ۔ وﮐﺮم ﺳﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ اس ﮐﮯ ﻣ ّﻮں‬ ‫ﻤ‬ ‫ﭼﻠ‬ ‫ﮐﻮ ﺑﮭﯽ دﺑﺎ رﮨﺎ ﺗﮭﺎ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﮩہ رﮨﯽ ﺗﮭﯽ”وﮐﺮم اور زور ﺳﮯ..واﮦ…آﮦ.. اور زور ﺳﮯ..ﺑﮩﺖ ﻣﺰا آ رﮨﺎ ﮨﮯ..آﮦ..ﺳﯽ..آﮦ ۔‬ ‫اﺗﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﻟﯿﮑﮭﺎ اﯾﮏ ﺑﺎر اور ﺟﮭﮍ ﮔﺌﯽ اور وﮐﺮم ﻧﮯ ﺑﮭﯽ اﭘﻨﺎ ﭘﺎﻧﯽ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﯽ ﭼﻮت ﻣﯿﮟ اﻧﮉﯾﻞ دﯾﺎ ۔ اب اﻧﺪھﯿﺮا ﮨﻮ رﮨﺎ ﺗﮭﺎ ۔‬ ‫دوﻧﻮں ﻧﮯ ﭘﮭﺮ اﭘﻨﮯ ﮐﭙﮍے ﭘﮩﻦ ﻟﯿﮯ ۔ وﮐﺮم ﻧﮯ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﮐﻮ اﯾﮏ ﮔﻮﻟﯽ دی اور ﺑﻮﻻ”اﺳﮯ ﮐﮭﺎ ﻟﯿﻨﺎ ﺗﻮ ﺗﻤﮩﺎرے ﺑ ّہ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﮔﺎ‬ ‫ﭽ‬ ‫۔ ورﻧہ ﺗﻢ ﻣﺎں ﺑﻦ ﺟﺎؤ ﮔﯽ”. ﻟﯿﮑﮭﺎ ﯾہ ﺳﻦ ﮐﺮ ڈر ﮔﺌﯽ ۔ ﻟﯿﮑﮭﺎ اﭘﻨﺎ ﮔﮭﮍا ﻟﮯ ﮐﺮ ﮐﻨﻮﯾﮟ ﮐﯽ اور ﭼﻞ ﭘﮍی اور ﭘﺎﻧﯽ ﺑﮭﺮ ﮐﺮ‬ ‫ﮔﮭﺮ ﮔﺌﯽ ۔ اس ﮐﮯ ﻣﺎں ﻧﮯ دﯾﺮ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ وﺟہ ﭘﻮﭼﮭﯽ ﺗﻮ ﻟﯿﮑﮭﺎ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ”ﻣﯿﮟ وﮐﺮم ﺳﮯ ﻣﻠﯽ ﺗﮭﯽ اور ﺑﺎت ﮐﺮﺗﮯ ﮐﺮﺗﮯ‬ ‫دﯾﺮ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ”.ﺟﺐ ﺳﯽ ﮔﻮری ﮐﯽ ﺑﺎت ﺳﻨﯽ ﺗﮭﯽ ﺗﺐ ﺳﮯ رﯾﮑﮭﺎ ﺑﮯﭼﯿﻦ ﺳﯽ رﮨﻨﮯ ﻟﮕﯽ ﺗﮭﯽ ۔‬
EMail : PkMasti@aol.com
Yahoo : Jan3y.J4na@yahoo.com

By Taha Gondal with No comments

0 comments:

Post a Comment

EMail : PkMasti@aol.com
Yahoo : Jan3y.J4na@yahoo.com

    • Popular
    • Categories
    • Archives