Monday, January 16, 2012

شوقین چوت کی چدائی




اُس دِن میں نائیٹ ڈیُوٹی کرکے سُبہ ساڑھے سات بجے گھر پہُںچا میری وائیپھ ایک ٹیچر ہے اؤر سکُول جانے کے لِئے تیّار ہو رہی تھی۔آٹھ بجے وو گھر سے نِکل گیّ۔ میں نہا کر پھریش ہو گیا اؤر روج کی ترہ سونے کی تیّاری کرنے لگا۔اَچانک درواجے پر دستک ہُئی تو میں چؤںک گیا۔ بڑی گہری نیںد آ رہی تھی اؤر میں بہُت پریشان تھا کی اِس وقت کؤن آ گیا۔مینے درواجا کھولا تو سامنے ایک اؤرت کھڑی تھی۔

کریب پچّیس سال کی اُمر کی ایک دیہاتی اؤرت کو دیکھکر مینے سوچا شاید کوئی ماںگنے والی ہے۔

"کیا چاہِئے" مینے پُوچھا۔

"میرا بھائی کام پر آیا بابُوجی ؟" وو بولی

"کؤن بھائی ؟" مُجھے گُسّا آ رہا تھا

"میرا بھائی راجُو بابُوجی" میٹھی سی آواز میں وو بولی

"راجُو بیلدار ؟" مینے اُسے اُپر سے نیچے تک دیکھتے ہُئے پُوچھا۔ اُن دِنوں ہمارے گھر میں کنسٹرکشن کا کام چل رہا تھا اؤر راجُو ایک بیلدار کا نام تھا راجُو ہمارے بِلڈِںگ ٹھیکیدار للّن کا سالا تھا۔یانی میرے سامنے کھڑی اؤرت للّن کی بیبی تھی۔

"جی بابُوجی راجُو بیلدار میرا بھائی ہے کل رات سے گھر نہی آیا تو مینے سوچا کی آپکے یہاں دیکھ لُوں" وو بڑی پیاری مُسکُراہٹ کے ساتھ بولی۔

مُجھے اُسکی مُسکُراہٹ بڑی سُوںدر لگی۔ مینے اُسے اَںدر آنے کے لِئے کہا تو وو اَںدر آکر نیچے زمین پر بیٹھنے لگی

"اَرے نیچے نہی سوپھے پر بیٹھو" وو شرماتی ہُئی سوپھے پر بیٹھ گیی ۔میں سامنے کے بیڈ پر بیٹھ گیا۔

"راجُو تو کل شام کو پاںچ بجے چلا گیا تھا اؤر سُبہ سے آیا نہی" مینے کہا۔ وو گرمِیاں کے دِن تھے کُولر کی سیدھی ہوا بیڈ پر آ رہی تھی۔ وو سوپھے پر بیٹھی تو شاید اُسے گرمی لگ رہی ہوگی۔

"کوئی بات نہی بابُوجی ، شاید کِسی دوست کے یہاں رُک گیا ہوگا راجُو۔میں کہیں اؤر دیکھ لُوںگی" وو بولی۔

مینے پُوچھا " کیا تُم للّن کی گھروالی ہو ؟" اُسنے ہاں میں گردن ہِلا دی ،بِلکُل بچّوں کی ترہ۔

"کیا نام ہے تُمہارا ؟" مینے باتوں کا سِلسِلا آگے بڑھایا۔

"آرتی" کہکر وو شرما سی گیّ۔

"بہُت سُوںدر نام ہے" مینے کہا "چاے پِیوگی آرتی ؟'

میرے مُوہ سے اَپنا نام سُنکر اُسنے اَچانک میری دیکھا "آپ تکلیف کیوں کرتے ہو بابُوجی ؟"

"اَرے تکلیف کیسی آرتی ، میں اَپنے لِئے تو بنا ہی رہا ہُوں تُم بھی پی لینا" مُجھے بار بار اُسکا نام لیکر بُلانے میں مزا آ رہا تھا۔

"ٹھیک ہے بابُوجی ، بنا لیجِئے" وو پھِر مُسکُرائی ۔ اَب مُجھے اُسکی مُسکُراہٹ اؤر اَچّھی لگی۔

میں کِچن میں چاے بنا رہا تھا اؤر من میں اُلٹے سیدھے وِچار آنے لگے۔چاے بنانے میں دھیان کہاں لگتا۔آںکھو کے سامنے آرتی کی کھُوبسُورت مُسکُراہٹ گھُوم رہی تھی۔چاے اُبل کر باہر نِکل گیّ۔

"کیا ہُآ بابُوجی ؟" آرتی نے آواز لگاکر پُوچھا۔ایسا لگا مانو میری گھروالی کُچھ پُوچھ رہی ہو

"کُچھ نہی "کہتے ہُئے میں چاے دو کپو میں لیکر رُوم میں آ گیا ۔ سامنے بیٹھی آرتی کو پسینا آ رہا تھا۔

"گرمی لگ رہی ہو تو اِدھر بیڈ پر آ جاّو آرتی" مینے کہا تو وو آکر میرے سامنے بیڈ پر بیٹھ گیّ۔ مینے دیکھا کی اُسکی ہائیٹ بہُت کم تھی لیکِن شریر بھرا ہُآ تھا تھوڈا پیٹ بھی نِکلا ہُآ تھا رںگ ساںولا لیکِن نین نکش تیکھے تھے

ہم دونو چاے پینے لگے ۔ مینے پُوچھا "اؤر گھر میں کؤن کؤن ہے آرتی" میں جان بُوجھکر اُسکا نام لے رہا تھا

"ہم دونو مِیاں بیبی اؤر ایک بچّا ہے بابُوجی۔ اَبھی چھوٹا ہے ایک سال کا اؤر ساتھ میں راجُو بھی رہتا ہے" وو آںکھوں میں آںکھیں ڈالکر بات کر رہی تھی

"دُوسرا بچّا ہونے والا ہے کیا ، آرتی ؟" پُوچھتے ہُئے میرا من جوروں سے دھڑکنے لگا۔ کہیں آرتی بُرا مان گیی تو ؟

"دھتت بابُوجی آپ بھی کیا پُوچھتے ہیں " وو شرما کر مُسکُرا دی "آپنے ایسا کیوں پُوچھا ؟"

"تُمہارا پیٹ دیکھکر" مینے ہِمّت کرکے کہ دِیا۔

"دھت بابُوجی اَبھی نہی ، اَبھی تو پہلا ہی چھوٹا ہے " اُسنے چاے ختم کرتے ہُئے کہا۔"اَچّھا اَب میں چلُوں بابُوجی ؟" وو اُٹھنے لگی

"تھوڑی دیر اؤر بیٹھو نا آرتی پلیز" کہتے ہُئے مینے اُسکا ہاتھ پکڑ لِیا۔

"یے کیا کرتے ہو بابُوجی ؟ کہیں کِسی نے دیکھ لِیا تو ؟ " اُسنے ہاتھ چھُڑانے کی کوشِش نہی کی

میری ہِمّت اؤر بڑھ گیّ۔ مینے اُسے اَپنے پاس کھیںچ لِیا "ہم دونو کے اَلاوا یہاں ہے کؤن جو ہمے دیکھیگا آرتی ؟" مینے اُسکا ایک چُمّا لے لِیا

"نہی بابُوجی ہمے جانے دو ،ہمے کھراب نا کرو" وو درواجے کی ترپھ جانے لگی۔ مینے اُسکا پلُّو پکڑ لِیا۔

"ایسے نہی آرتی ، ایسے مت جاّو پلیز ۔ میں تُمہارے ساتھ کُچھ اؤر دیر رہنا چاہتا ہُوں" میرے سور میں وِنتی تھی

"نہی بابُوجی میں اؤر نہی رُک سکتی۔ آپ اِتنے لںبے اؤر میں اِتنی چھوٹی ، ہمارا مِلن کیسے ہوگا "وو بولی اؤر اِسی چھینا جھپٹی میں اُسکی ساڑی کھُل گیّ۔اُسنے اَپنی باہے اَپنے سینے پر رکھ لی۔

"یے کیا چھُپا رہی ہو ہمسے آرتی رانی ،دِکھاّو نا" مینے اُسکی باہے ہٹانے لگا۔

"آپ بڑے گںدے ہو بابُوجی ،کیسی گںدی باتے کرتے ہو ۔ یے تو میرا بچّا چُوستا ہے اِنمے آپ کیا لوگے ؟" آرتی بولی۔

"تو ہمے بھی دِکھاّو نا ہم بھی چُوس لیںگے تھوڑی سی" کہتے ہُئے مینے اُںسکی دونو چُچِیاں پکڑ لی ۔ کیا پتّھر کی ترہ سخت چُچِیاں تھی آرتی کی چُچِیاں پکڑتے ہی آرتی بُری ترہ سے کاںپنے لگی

" کیا بات ہے آرتی رانی ؟ کاںپ کیوں رہی ہو " میں گھبرا گیا تھا

"کیا بتاُّن بابُوجی ، بہُت ڈر لگ رہا ہے ۔ پتا نہیں آپ میرے ساتھ کیا کرنے والے ہو ۔ مُجھے چھوڑ دو بابُوجی، جانے دو، میں آپکے ہاتھ جوڑتی ہُوں۔"

مُجھے لگا کہیں آرتی شور نا مچا دے ، آخِر اَڈوس پڑوس میں اؤر بھی لوگ رہتے ہیں

"اِسمے ڈرنے قی کیا بات ہے آرتی رانی ؟ میں تُمہارے ساتھ زبردستی نہیں کرُوںگا۔ جو بھی ہوگا تُمہاری رزامںدی سے ہوگا ۔ آاو بیڈ پر بیٹھ کر بات کرتے ہیں ۔ ٹھیک ہے آرتی رانی ؟" مینے پُوچھا

" ٹھیک ہے بابُوجی" اُسکے ہاں کہتے ہی میری جان میں جان آئی ۔ مینے آرتی کو اَپنی باہوں میں اُٹھا لِیا اؤر لا کر بیڈ پر لِٹا دِیا۔ بِلکُل پھُول قی ترہ کومل تھی آرتی۔ ہلکی سی، چھوٹی سی اؤر پیاری سی

" اَب بتاّو آرتی رانی، کِسّے ڈر لگتا ہے تُمہے " میں اُسکے پاس بیٹھ گیا اؤر سِر پر ہاتھ پھیرنے لگا

" بابُوجی آپ مُجھے بار بار آرتی رانی کہکر کیوں پُکارتے ہو ؟ میں کہیں قی رانی تھوڑے نا ہُوں ۔ میرا نام تو سِرف آرتی ہے ۔" وو بولی ۔

"رانی تو تُم بن گیی ہو آرتی ، آج سے میرے اِس دِل قی " کہکر مینے جھُکّر اُسکے ہوںٹھ چُوم لِئے

" ہاے رام بابُوجی ، آپ تو بڑے بیشرم ہو " اُسنے اَپنا چیہرا اَپنے ہاتھوں سے چھُپا لِیا ۔ آرتی قی اِس اَدا پر تو میں جیسے پھِدا ہی ہو گیا۔ مینے اُسکے چیہرے سے ہاتھ ہٹاتے ہُئے کہا "آرتی رانی میرا دِل کرتا ہے کِ تُمہارے اِن ہوںٹھو قی ساری لِپسٹِک چاٹ لُوں۔ تُم بُرا تو نہیں مان جاّوگی"

"اِسمے بُرا مانّے والی کیا بات ہے بابُوجی ؟ بس ایک بات کا خیال رکھنا کِ اَگر آپ میری لِپسٹِک چاٹنا چاہتے ہو تو نیی لِپسٹِک بھی مُجھے دِلانی پڑیگی ، بولو مںزُور ہے ؟" میرا کلیزا اُچھال مارنے لگا

"ایک نہی دس لِپسٹِک لے لینا میری جان " میری کِسمت زور مار رہی تھی شاید ۔

"تو پھِر آپکو کِسنے روکا ہے لیکِن اَپنا وادا یاد رکھنا " آرتی مُسکُراتے ہُئے بولی۔ وہی کاتِلانا مُسکُراہٹ جِسنے مُجھے پاگل کِیا تھا۔ میں پاگلوں قی ترہ اُسکے ہوںٹھو کو چُومنے لگا ۔ تھوڑی دیر باد آرتی بھی میرا ساتھ دینے لگی ۔

آرتی نے اَپنا ایک ہاتھ میرے سِر کے پیچھے رکھ لِیا اؤر میرا چیہرا اَپنے ہوںٹھوں پر دبانے لگی۔ میرے ہوںٹھ اَپنے ہوںٹھوں میں لیکر چُوسنے لگی، میرے ہوںٹھ اَپنے داںتوں سے کاٹنے لگی۔ پتا نہی کِتنی دیر تک ہم دونو ایک دُوسرے کو چُستے رہے۔ کِتنے رسیلے ہوںٹھ تھے آرتی کے ،ایسا لگا مانو میں شہد پی رہا تھا، اِتنے میٹھے ہوںٹھ مینے آج تک نہیں چکھے تھے۔ جب ہم اَلگ ہُئے تو مینے کہا "آرتی رانی ، میرا من کر رہا ہے کِ میں تُمہارے یے کومل کومل گال بھی چُوسُو "

"پھِر تو آپکو ایک پاُّڈر کا ڈِبّا بھی دِلانا پڑیگا بابُوجی " کہکر آرتی کھِلکھِلاکر ہںس پڑی۔ کیا نزارا تھا وو۔ آرتی کے ہںستے ہی مانو سارے کمرے میں موتی بِکھر گیے ۔ میرا روم روم کھِل گیا ۔ کیا کِسی اؤرت قی ہںسی اِتنی سُںدر بھی ہو سکتی ہے

"میں تو تُمہے سارا میکپ کا سامان ہی دِلا دُوںگا میری جان اؤر اَپنے ہاتھوں سے تُمہے دُلہن قی ترہ سجاُّوںگا "کہکر میں اُسکے گالو کو چُومنے لگا

"سچ بابُوجی ؟" اُسنے مُجھے زور سے بھیںچ لِیا اَپنی باہوں میں، "اوہ بابُوجی آپ کِتنی پیاری باتے کرتے ہو ۔ آج آپنے مُجھے جیت لِیا بابُوجی۔ میں آج سے سچمُچ آپکی آرتی رانی بن گیی ہُوں " اؤر وو بھی مُجھے بیتہاشا چُومنے لگی

مینے اَپنا ایک ہاتھ اُسکے سینے قی ایک گولائی پر رکھ دِیا ۔ آرتی نے کوئی پرتِرودھ نہی کِیا ۔میں سمجھ گیا کِ آرتی اَب کوئی پرتِرودھ نہیں کریگی

وہی ہاتھ مینے دُوسری گولائی پر رکھ دِیا ۔ "کُچھ ڈھُوںڈھ رہے ہو کیا بابُوجی ؟" آرتی دھیرے سے میرے کان میں بولی

"ہاں آرتی رانی "مینے اُسکے کان میں کہا

"کیا ڈھُوںڈھ رہے ہو بابُوجی ؟ کیا میں آپکی مدد کرُوں؟" آرتی میرا کان داںتوں سے کاٹنے لگی

" ہاں آرتی رانی میری مدد کرو نا ۔ میرا دِل تُمہاری چولی میں کہیں کھو گیا ہے اُسے ڈھُوںڈھنے میں میری مدد کرو " میرا دِل بیکابُو ہو رہا تھا

"اَگر آپکا دِل میری چولی میں کھو گیا ہے تو ایسے اُپر سے ٹٹولنے سے تھوڑے ہی مِلیگا بابُوجی ، زرا اَںدر کوشِش کرو " پھِر وہی شرارتی مُسکُراہٹ

" واہ آرتی رانی تُمنے تو میرے دِل کِ بات کہ دی ،" ٹھیک ہے میں اَپنا دِل تُمہاری چولی کے اَںدر ڈھُوںڈھتا ہُوں "

اِتنا کہکر مینے اَپنا ہاتھ اُسکے بلاُّس میں ڈال دِیا ۔اُسکی ایک گولائی کو پکڑ لِیا ۔ کِتنی سخت چُچِ تھی آرتی قی۔ پھِر دُوسری گولائی کو پکڑ کر بہُت دیر تک دباتا رہا ۔ اِتنا دبانے پر بھی چُچِیاں نرم نہی ہُئی ۔ اَب میرا من آرتی قی گولائیّاں چُوسنے کے لِئے بیتاب ہو رہا تھا

" کیا ہُآ بابُوجی دِل مِلا یا نہی " آرتی آںکھے بںد کِئے ہُئے بولی

"نہیں مِلا میری جان ۔ اَب کیا کرُوں آرتی رانی" مینے اُسکا ستن زور سے دبا دِیا

"اُپھپھ بابُوجی ، یے کیا کرتے ہو ؟اَگر نہیں مِلا تو ایسے دبانے سے تھوڑے ہی مِل جاّیگا ، چولی اُتار کر ڈھُوںڈھ لو نا "آرتی گرم ہو چُکی تھی

میں بھی تو یہی چاہتا تھا۔ مینے اُسکے بلاُّس کے سارے ہُک کھول دِئے ۔آرتی نے اَںدر برا نہی پہنی تھی ہُک کھولتے ہی دونو مست کبُوتر باہر جھاںکنے لگے۔ مینے آرتی کو بیٹھا لِیا اؤر اُسکا بلاُّس اُسکے سینے سے اَلگ کر دِیا ۔ دونو سپھید کبُوتر اَب آزاد تھے اؤر تنے ہُئے تھے

"آرتی رانی یے بتاّو تُمہاری یے سُںدر چُچِیاں اِتنی سخت اؤر تنی ہُئی کیوں ہیں" مینے چُچِیوں کو سہلاتے ہُئے پُوچھا ۔

" بابُوجی یے تنی ہُئی نہی بھری ہُئی ہیں ۔ اِنمے دُودھ بھرا ہے میرے بیٹے کے لِئے ، جب وو اِنکو چُوس لیتا ہے تو اُسکی بھُوکھ مِٹ جاتی ہے اؤر مُجھے بھی بڑا چین مِلتا ہے ۔جب تک وو نہی چُوستا اِنمے درد ہوتا رہتا ہے جیسا قی اَب بھی ہو رہا ہے " آرتی بولی

"آرتی رانی تُمہاری چُچِیوں میں درد ہو رہا ہے اؤر مُجھے بھی بھُوکھ لگی ہے ، کیا کوئی ایسا راستا نہی ہے قی میری بھُوکھ مِٹ جائے اؤر تُمہاری چھاتِیوں کا درد کم ہو جائے میری جان " مینے اَپنے دِل قی بات کہ دی

"میں سمجھ گیی بابُوجی آپ کیا چاہتے ہو ۔ مُجھے مالُوم تھا قی آپ کا دِل میری چُچِیوں پر آ چُکا ہے اؤر آپ اِنہے چُوسے بِنا نہی چھوڑوگے ۔آاو بابُوجی میری گود میں لیٹ جاّو آج میں آپکو اَپنے بچّے قی ترہ چُچِ پِلاُّوںگی ۔ جی بھر کر پِیو بابُوجی لیکِن کاٹنا مت " آرتی نے کہا

میں آرتی قی گود میں لیٹ گیا اؤر آرتی نے دو اُںگلِیوں سے پکڑ کر چُچِ ویسے ہی میرے مُوہ میں دی جیسے کوئی ماں اَپنے بچّے کو دیتی ہے۔ میں چُوسنے لگا تو سچمُچ آرتی قی چُچِ میں سے دُودھ آنے لگا ۔ کِتنا گرم اؤر میٹھا دُودھ تھا آرتی قی چُچِیوں کا۔ میں ایک ایک بُوںد چُوس لینا چاہتا تھا اؤر شاید آرتی بھی یہی چاہتی تھی اِسلِئے ایک چُچِ کھالی ہوتے ہی اُسنے میرے مُوہ میں جھٹ دُوسری چُوچی ڈال دی

" چُوسو بابُوجی اؤر زور سے چُوسو ، جی بھر کر پِیو آج اَپنی آرتی رانی قی چھاتِیاں ، چُوس چُوس کر کھالی کر دو بابُوجی ، اِنکو تھوڑی نرم بنا دو ، اِنکا درد مِٹا دو " آرتی مستی میں بڑبڑا رہی تھی "ہاں بابُوجی ایسے ہی پیار سے چُوسو ، ہائے بابُوجی آپ کِتنی اَچّھی ترہ چُوستے ہو اِتنا مزا تو پہلے کبھی نہی آیا ۔ للّن تو کبھی اِنہے چُوستا ہی نہی "

"کیا کہتی ہو آرتی رانی للّن اِن چُچِیوں کو نہی چُوستا ۔ بھلا ایسا کؤن سا مرد ہوگا جو تُمہاری اِن مدبھری چُوچِیوں کو چھوڑ دیگا "

" سچ کہا بابُوجی آپنے کوئی مرد نہی چھوڑیگا لیکِن للّن مرد کہاں وو تو نامرد ہے ، ہِزڑا ہے ہرامی "آرتی قی آںکھے بھر آئی

"تو پھِر یے بچّا کِسکا ہے آرتی رانی "میں چوںک گیا تھا

"یے بچّا بھی آپ جیسے کِسی بابُو کا ہے بابُوجی دو سال پہلے اُنسے ایسے ہی مِلی تھی جیسے آج آپ مِل گیے بابُوجی اؤر اُنہونے اَپنے پیار قی نِشانی یے بچّا میرے پیٹ میں ڈال دِیا " مینے آرتی کو اَپنے پاس کھیںچ لِیا اؤر جی بھر کر چُوما

"تو کیا تُم میرے بچّے کو بھی جنم دوگی آرتی رانی " دھیرے دھیرے واسنا قی جگہ پیار نے لے لی

" ہاں بابُوجی میں آپکے بچّے کو جنم دُوںگی ، آج آپ اَپنا بچّا میرے پیٹ میں ڈال دو ، بابُوجی آپ کا بچّا آپ ہی قی ترہ ہونا چاہِئے لںبا اؤر تگڑا بابُوجی ۔ ایسے ہی پیار سے میری چھاتِیاں چُوسے جیسے آج آپنے چُوسی ہیں

"سچ آرتی رانی مُجھے تو وِشواس ہی نہی ہو رہا قی تُم میرا بچّا جنوگی " میرا دِل میرے مُوہ کو آ رہا تھا

" اِسمے وِشواس نا کرنے والی کؤن سی بات ہے بابُوجی ۔ میں آپکے ساتھ ایک بِستر پر لیٹی ہُوں ، نںگی پڑی ہُوں ، آپنے چُوس چُوس کر میری چھاتِیاں کھالی کر دی میرِچُچِیاں نِچوڑ ڈالی اؤر اَب میں آپسے ایک بچّے قی بھیکھ ماںگ رہی ہُوں ۔ پلیز بابُوجی مُجھے آپکا بچّا پیدا کرنا ہے " آرتی گِڑگِدنے لگی

"آرتی رانی اِسمے بھیکھ ماںگنے والی کوئی بات نہی ۔ میں تو کھُد چاہتا ہُوں قی تُم میرا بچّا پیدا کرو میری جان "

" تو پھِر دو نا بابُوجی دیر کِس بات قی ، ڈال دو نا اَپنا بچّا میرے پیٹ میں ، میں تیّار کھڑی ہُوں بابُوجی آاو "آرتی کو کافی جلدی تھی چُدونے قی

" اَبھی تُم پُوری ترہ تیّار کہاں ہو آرتی رانی ، یے گھاگھرا بھی تو کھولنا ہے ، تبھی تو میں تُمہارے پیٹ میں بچّا ڈال سکتا ہُوں " میں مزے لے رہا تھا

"کھول دو گھاگھرا بابُوجی آپکو کِسنے روکا ہے اؤر نہی تو یے لو میں کھُد ہی کھول دیتی ہُوں " کہتے ہُئے آرتی نے ایک جھٹکے سے اَپنے گھاگھرے کا ناڈا کھیںچ دِیا ۔ اَب اُسکا گھاگھرا زمین پر تھا اؤر میری آرتی میرے سامنے بِلکُل نںگی کھڑی تھی ۔ کِتنی سُںدر دِکھ رہی تھی۔ مینے بھی اَپنے سارے کپڑے اُتار دِئے اؤر پُورا نںگا ہوکر آرتی کو باہوں میں اُٹھا لِیا

" آاو آرتی رانی آج میں تُمہاری منوکامنا پُوری کرُوںگا ۔ تُمہارے پیٹ میں اَپنا بچّا ڈالُوںگا اؤر تُمہاری یونِ قی ساری پیاس بُجھا دُوںگا " کہتے ہُئے مینے آرتی کو بِستر پر لِٹا دِیا اؤر کھُد اُسکے اُپر چڑھ گیا

باکی اَگلے بھاگ میں 

EMail : PkMasti@aol.com
Yahoo : Jan3y.J4na@yahoo.com

By Taha Gondal with No comments

0 comments:

Post a Comment

EMail : PkMasti@aol.com
Yahoo : Jan3y.J4na@yahoo.com

    • Popular
    • Categories
    • Archives