Thursday, January 12, 2012

جوانی دیوانی چودائی

آج میں اَپکو اَپنے دِدِ کے چُدے کِ ایک ایسِ کہانِی سُنّانے جا رہا ہُوں جِسے پدھنے کے باد اَپ دیکھینگے کِ کِس ترہ سے ایک اَدمِ اَپنے ایک ایہسن کا بدلا ایک رات اُسکے ساتھ چُدے کرکے چُکتا ہے۔ اِسّے پہلے کِ میں اَپنے کہنِ کو سُرُ کرُ سبسے پہلے میں اَپکا پرِچے دِدِ اؤر اُس اَدمِ سے کرا دُ جِسکے برے مے میں اَپنے اِس کہنِ مے بتنے جا رہا ہُ۔ میرِ دِدِ ایک ایسِ لدکِ ہے جِسے دیکھنے کے باد ایک بُدھے اَدمِ کو بھِ اَپنِ جونِ لؤت کے اَ جتِ ہے۔ میرِ دِدِ کِ تب اُمر اُنتِس سال کِ تھِ۔ اؤر وو اَدمِ جِسکے بارے مے میں بتؤنگا اُسکِ اُپر پچپن سال کِ ہے۔ وو پدوس مے ہِ رہتا تھا۔ ویسے تو اُسے سوسِایتی مے لوگ بہُت ہِ پریم کرتے ہے اؤر کبھِ اِجت کرتے ہے۔ ایک دِن دِدِ جب رات کو کُچھ لیت آ رہِ تھِ تو رستے مے دِدِ کو کُچھ بدمس اَپنے گدِ مے بیتھنے ولے تھے کِ وو اُسِ سمے وہا اَگیے اؤر دِدِ کو اُنسے چھُدیا۔

اُس گھتنا کے دو مہِنے کے باد کِ یے کہنِ ہے۔ اُس دِن دِدِ کو اَپنے اوفِّسے کے ایک پرتِ مے جنا تھا۔ میں اَپنے دوست کے یہا کِسِ جرُرِ کم سے جنا تھا۔ میں کیوکِ رُوم سے باد مے نِکلا سو رُوم کِ چبھِ میرے پاش ہِ تھا۔ رات مے مُجھے اَنے مے دیر ہو گیِ۔ میں جب وہا سے چلا تبھِ برِش ہونے لگِ۔ جب میں اَپنے سولونی مے پہُچا تو دِدِ کو اُنسلے کے دروجے پر کھدا پیا۔ دِدِ کو وہا دیکھا تو میرے من مے بدمشِ سُجھِ مینے سوچا کِ دیکھتا ہُ کِ دِدِ کیا کرتِ ہے مینے دیکھا کِ رُوم کا دروجا کھُلا اؤر دِدِ اَندر چلِ گیِ۔ اَب رُوم کا دروجا بند ہو گیا۔ اُس وکت رات کے آتھ بج رہے تھے۔ اُس سمے بھِ برِس ہو رہِ تھِ۔میں اَب یے سمجھ گیا کِ آج رت جو کُچھ بھِ ہونے جا رہا تھا وو اُس اَدمِ کے لِیے بِلکُل ہِ رنگِن رات ہونے جا رہا تھا۔میں اَب اُس رُوم کے اور گیا جہا دِدِ بیتھِ ہُیِ تھِ۔ دِدِ کو کفِ تھند لگ رہِ تھِ۔ اَب اُنسلے دِدِ کے لِیے ایک گلسس مے پنِ لیکے اَیے۔ دِدِ نے گِلس کے پہِ کو پِ لِیا۔ اَب اُنسلے دُسرے رُوم مے چلے گیے۔ کُچھ دیر کے بد جب اُنسلے دِدِ کے پاس اَیے تو دِدِ نے اُنسے کہا کِ اَب مُجھے نِند آ رہِ ہے تو اُنسلے نے بولا چلو سوتے ہے۔ اَب وو دِدِ کے ہتھ کو پکد لِیا اؤر دِدِ کو لیکے دُسرے رُوم مے لے گیا۔ وہا لے جکے دِدِ کو اَب بید پر لیتا دِیا۔ اَب دِدِ کِ اَنکھے بند ہو گیا تھا۔ میں سمجھ گیا کِ آج وو اَپنے ایہسن کا کرج وشُل کرنے جا رہا تھا۔ اَب وو دِدِ کے سندِل کو کھول دِیا اؤر دِدِ کے سدِ کو اُترنے لگا۔ دِدِ کے سادِ کو اُترنے کے باد اُسنے دِدِ کے سدِ کو بلسونی مے ہنگر مے دل دِیا۔ اَب وو دِدِ کے سیا کو کھول دِیا۔ دِدِ نے پینتی پہن رکھا تھا۔ دِدِ کے سیا کو اُترنے کے باد اُسنے دِدِ کے بلؤسے کو اُتر دِیا۔ اَب اُسنے دِدِ کے پنتی کو اُتر دِیا۔ دِدِ کے پینتی کو اُترنے کے باد اُسنے دِدِ ایک برا کو کھول دِیا۔ اَب دِدِ اُسکے سمنے بِلکُل ہِ ننگِ پدِ ہُیِ تھِ۔ اَب اُسنے دِدِ کے سرے کپدو کو لے جکے بلسونی نے فیلا دِیا۔ اَب وو دِدِ کے پاس اَیا اؤر دِدِ کے تنے ہُیے بُوبس کو برِ برِ سے دبیا تو اُسکا لُند اَپنے اَپ ہِ لُنگِ کے باہر اَگیا۔ اَب وو اَپنے اَپکو اؤر روک نہِ پا رہا تھا۔ اَب اُسنے دِدِ کے چُد کو پُرِ ترہ سے دیکھنے کے لِیے دِدِ کے دونو پیرو کو فیلا دِیا۔ دِدِ کے جنگھو پر بیتھ گیا۔ اَب اُسنے اَپنے لُند کو دِدِ کے بھِنگے ہُیے چُد پر رکھ دِیا۔ اؤر دِدِ کے چُد مے اَپنے لُند کو گھُسنے کے لِیے اَپنے کمر کو دھِرے دھِرے پُس کِیا تو مینے دیکھا کِ دِدِ کے چُد مے اُسکے لُند کا سوسک چلا گیا۔ اَب اُسنے دِدِ کے کمر کو پکد کے اَپنے کمر کو جور سے جھتکا مرا تو دِدِ اَپنے جگہ سے ایک اِنچ اُپا گھسک گیِ۔ اَب مینے دیکھا کِ دِدِ کے چُد مے اُسکا دو اِنچ لُند چلا گیا تھا۔ اَب وو اَپنے کمر کو ہِلنے لگا اؤر دِدِ کے چُچِاو کو دھِرے دھِرے دبنے لگا۔ کُچھ دیر کے باد اُسنے ایک جورسے جھتکا مرا تو دِدِ کے مُہ سے آآّہّہّہّہّہّہ کِ اَوج نِکلِ۔ میں سمجھا کِ دِدِ کو ہوس اَگیا لیکِن ویسا نہِ تھا۔ دِدِ کے چُد مے اُسکا اَدھا لُند چلا گیا تھا۔اَب وو اَپنے ہوتھو کو دِدِ کے ہوتھو پر رکھا اؤر دِدِ کے ہوتھو کو چُسنے کے ساتھ ہِ دِدِ ایک کمر کو پکد کے جور جور سے جھتکے مرنے لگا۔ اَب مینے دیکھا کِ دِدِ کے چُد مے اُسکا پُرا لُند چلا گیا تھا۔ اَب مینے دیکھا کِ دِدِ کے دونو پیرو کو فولد کر کے دِدِ کے پیرو کو فیلا دِیا اؤر اَب وو بیتھ گیا اؤر جور جور سے جھتکا مرنے لگا اؤر دونو چُچِاو کو مسلنے لگا۔ لگبھگ بِس مِنُت کے باد اُسنے جب اَپنے ہوتھو سے دِدِ کے ہوتھو کو چُسنے کے لِیے دِدِ کے ہوتھو کے اُپر اَپنے ہوتھو کو رکھا تو میں سمجھ گیا کِ اُسکا سپُرم دِدِ کے چُد مے گِرنے ولا تھا کیوکِ وو دِدِ کے چُد مے جور جور سے جھتکے مر رہا تھا۔ کُچھ دیر کے باد وو سنت پد گیا۔ کُچھ دیر کے باد وو دِدِ کے اُپر سے ہت گیا اؤر دِدِ کو اَپنے بہو مے کستے ہُیے سو گیا۔

بھور مے جب میرِ نِند کھُلِ تو مینے دیکّہا کِ وو دونو ویسے ہِ سویے ہُیے تھے۔ اَچنک دِدِ کِ نِند کھُلِ تو وو اَپنے اَپکو اُسکے بہو مے ننگِ اَوستھا مے دیکھا تو سمجھ گیِ۔ وو بھِ جگ گیا تھا۔ اَب اُسنے دِدِ کے گل پر ایک چُما لِیا۔ اَب وو دِدِ کے گند کو اَپنے ترف کرنے کہا تو دِدِ نے بِنا کُچھ کہے اَپنے پِتھ کو اُسکے ترف کر دِیا۔ اَب وو اُتھ کے دِدِ کے گند مے اَپنے لُند کو دلنے کے لِیے سبسے پہلے دِدِ کے گند پر اَپنے لُند کو رگدا تو مینے دیکا کِ دِدِ کے گند پر اُسکے لُند کا پنِ چھُت گیا۔ اَب اُسنے دِدِ کے گند کو گِلا کر دِیا۔ اَب دِدِ نے اَپنے گاند کو اَپنے ہتھو سے فیلا دِیا۔ اُسنے اَپنے لُند کو دِدِ کے گند مے دلنے کے باد اُسنے دِدِ کے کمر کو پکد کے جور جور سے تِن جھتکے مرا تو دِدِ پُرِ ترہ سے چتپتا اُتھِ۔ اَب دِدِ نے اَپنے کمر کو کھِچنے لگِ تو وو دِدِ کے اُپر چدھ گیا۔ اؤر دِدِ کے گند مے اَپنے لُند سے پُمپِنگ کرنے لگا۔ کُچھ دیر کے باد دِدِ سنت پد گیِ۔ وو دِدِ کے اُپر چدھ کے دِدِ کو بِس مِنُت تک پیلتا رہا تب وو سانت ہو گیا۔ کُچھ دیر ویسے ہِ پدے رہنے کے باد وو دِدِ کے اُپر سے ہت گیا۔

اَب دِدِ کو سِدھا کرنے کے باد دِدِ کے پیر کو ہلکا سا فیلیا تو دِدِ نے بولا کِ پیشب لگِ ہے۔ وو دِدِ کو لیکے باتھرُوم مے گیا وہا سے جب وپس اَیے تو مینے دیکھا کِ دِدِ نے اَب اُسکے لُند کو اَپنے مُتھِ مے پکد رکھا تھا۔ اَب دِدِ بید پر لیت گیِ۔ اَب اُنسلے نے ایک دِبے کو لیکے اَیے اؤر دِدِ کے کمر کے پاس رکھا ۔ اَب دِدِ کے چُد مے تیل لگنے لگے تو دِدِ نے بھِ اَپنے ہتھو مے تیل لے کے اُسکے لُند مے تیل لگنے لگِ۔ تیل لگنے کے باد وو دِدِ کے جنگھ پر بیتھ گیے اَب دِدِ نے اَپنے چُد کو فیلا دِیا۔ اُسنے اَپنے لُند کو دِدِ کے چُد پر ستا کے جور سے جھتکا مرا تو دِدِ کے مُہ سے آآّآّآّآّآّاَہّہّہّہّہّہّہ اُواُواُواُواُواُواُواُوفّفّفّفّفّفّفّفّفّفّفّفّفّفف کِ چِکھ کو سُن کے سمجھ گیا کِ دِدِ کے چُد مے اُسکا لُند چلا گیا اَب اُسنے دِدِ کے چُچِاو مے تیل لگنے کے باد چُچِاو کو مسلنے کے ساتھ ہِ دِدِ کے چُد مے اَپنے لُند کو اَندر اؤر اَندر لے جنے کے لِیے جور جور سے جھتکے مرنے لگا۔ دِدِ اُسکے ہر ایک جھتکے کا جبب آآّہّہّہّہّہّہّہّہ اُواُواُواُواُواوہّہّہّہّہّہّہّہ آآّآّآّہّہّہّہّہّہ ننّنّنّاآّآّآئیئیئیئیئیئیئیئیئیئیئیئی دھیئیئیئیئیئیریریئیئیئیئیئیئیئے آآّآاَہّہّہّہّہّہّہّہ اُواُواُواُواُواوہّہّہّہّہّہ اُواُواُواُواُواُمّمّمّمّمّم آآّآّآہّہّہّہّہ کِ اَوج نِکل رہِ تھِ۔ کُچھ دیر کے باد جب اُسکے کا کُچھ بھگ اَندر چلا گیا تو اُسنے دِدِ سے پُچھا کیسا لگ رہا ہے تو دِدِ نے اَنکھے بند کر کے مُسکُرتے ہُیے اَپنے گردن کو ہِلا کر ہا مے جبب دِیا۔ اِتنا سُن کے اُسکو فِر سے جوس آیا اؤر اُسنے جور سے جھتکا مرا تو دِدِ پُرِ ترہ سے سِہر اُتھِ۔اَب دِدِ کے چُد مے اُسکا پُرا دندا چلا گیا تھا۔ دِدِ کُچھ دیر کے باد مدہوس بھرِ اَندز مے اَوج نِکلنے لگِ جِسّے اُسکا جوس اؤر بدھنے لگا۔ اُسنے دِدِ کے چُد مے اَپنے پُرے لُند کو گھُسنے کے لِیے ایک جور کا دھکا مرا تو دِدِ چھتپتا اُتھِ اؤر آآّہّہّہّہّہّہّہّہ اُواُواُواُواُواوہّہّہّہّہّہّہّہ آآّآّآّہّہّہّہّہّہ ننّنّنّاآّآّآئیئیئیئیئیئیئیئیئیئیئیئی دھیئیئیئیئیئیریریئیئیئیئیئیئیئے آآّآاَہّہّہّہّہّہّہّہ اُواُواُواُواُواوہّہّہّہّہّہ اُواُواُواُواُواُمّمّمّمّمّم آآّآّآہّہّہّہّہ کِ اَوج کے ستھ اَپنے چُد کو سہلنے لگِ۔ تب اُسنے بولا بس اؤر پچ مِنُت کِ بات ہے۔ اِتنا کہتے ہُیے اُسنے دِدِ کے چُچِ کو اَپنے مُہ سے لیکے چُسنے لگا اؤر اَپنے کمر کو ہِلنے لگا۔ دِدِ بھِ کُچھ دیر کے باد مزا لینے لگِ۔

مُجھے اَپنے اُنتِس سال کِ جون دِدِ کو پچّپن سال کے سندھ سے چُدتے دیکھ کے بہُت ہِ مجا آ رہا تھا۔ کُچھ دیر کے باد اُسنے دِدِ کے ہوتھو کو چُسنا سُرُ کِیا تو دِدِ بھِ اُسکا کھُل کے ستھ دینے لگِ۔ میں سمجھ گیا کِ اَب دونو پُرے سبب پر ہے۔ دِدِ اَپنے دونو جنگھو کو فیلا رکھا تھا۔ اَب اُسکا پُرا لُند دِدِ کے چُد مے چلا گیا تھا۔ دِدِ اَپنے ہتھو کو اُسکے پِتھ پر رگر رہِ تھِ اؤر وو دِدِ کے دونو چُچِاو کو مسلتے ہُیے چود رہا تھا۔ اِس ترہ سے دِدِ اَپنے کرج کو اُتروا رہِ تھِ۔

کُچھ دیر کے باد دونو سنت پد گیے تو مینے سمجھ لِیا کِ دِدِ اَب پُرِ ترہ سے اُسکِ رکھیل بن گیِ تھِ۔

دس مِنُت کے باد وو دِدِ کے اُپر سے ہت گیا۔ دِدِ کِ چُد کو دیکھ کے ایسا لگتا تھا کِ جیسے رات بھر کُتے کِیا گیا ہو۔ کُچھ دیر کے باد دِدِ اُتھ کے اَپنے کپدو کو پہن کے تیّر ہو گیِ تو میں وہا سے ہت گیا۔ کُچھ دیر کے باد میں دروجے کِ گھنتِ بجے۔دِدِ نے دروجا کھولا۔اُنہونے پُچھا کِ کب اَیے تو مینے بتیا کِ اَبھِ اَیا ہُ۔ مینے اُنسے پُچھا کِ آپ کب اَیِ تو اُنہونے بتیا تھودے دیر پہلے ہِ۔

ہم دونو اَب اَپنے رُوم پر چلے گیے۔ اُس روج میں دِن بھر اُس رات کے چُدے کے برے مے سوچتا رہا۔ لیکِن دِدِ کو اِس بات کا پتا نہِ چلنے دِیا کِ مینے اُنکِ چُدے کو دیکھا ہے۔

EMail : PkMasti@aol.com
Yahoo : Jan3y.J4na@yahoo.com

By Taha Gondal with No comments

0 comments:

Post a Comment

EMail : PkMasti@aol.com
Yahoo : Jan3y.J4na@yahoo.com

    • Popular
    • Categories
    • Archives